EBOOK پطرس کے مضامین


10 thoughts on “EBOOK پطرس کے مضامین

  1. says: EBOOK پطرس کے مضامین Free download پطرس کے مضامین

    EBOOK پطرس کے مضامین A few days back when I first started this collection of short essays I was mostly found rolling on the floor laughing in my room for no reason Patras can pick up a very trite and boring topic like the Geography of Lahore and embellish it with such spices that one can't help reading it twice thriceor as many times as your literary tastes can t

  2. says: review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari EBOOK پطرس کے مضامین Patras Bukhari Ö 4 Summary

    Patras Bukhari Ö 4 Summary review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Free download پطرس کے مضامین This is an interesting amazing and humorous read I have enjoyed it a lot Syed Ahmad Shah commonly known as Patras Bukhari the author of the book was a well known Urdu writer humourist and Pakistani diplomat He had served as the first Principal of Government College Lahore after the independence of Pakistan from 1947 50 Due to his services Government College Lahore named their auditorium Bokhari Auditorium to honour him

  3. says: EBOOK پطرس کے مضامین

    EBOOK پطرس کے مضامین Title The Essays of PatrasPatras Bokhari's literary fame rests on this slim compilation of humorous and satirical essaysIt is a uick readI found it a mixed bagalthough my expectations were higher for such an acclaimed bookI enjoyed parts of itwhich were no doubt brilliantThe conclusion of Mable and Me is hilariousStudyin

  4. says: review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari EBOOK پطرس کے مضامین Patras Bukhari Ö 4 Summary

    EBOOK پطرس کے مضامین It was hilarious Even due to the fact that an excerpt from this book was included in my urdu textbook at school and I had a lot of memories about how we mocked each other with the jokes in this book I am a big fan of Urdu humour My favourites include works of Ibn e Insha Mushta Ahmed Yousufi Col Mohammad Khan and most of all Patras Bukhari I probably read the excerpt in my texbook than 15 20 times over the year and at that time

  5. says: EBOOK پطرس کے مضامین review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Patras Bukhari Ö 4 Summary

    EBOOK پطرس کے مضامین Ohhh For the first time I read funny short stories in Urdu Patras Bukhari's writing style had truly inspired me He wrote simple boring stories in a way that a reader can't resist without laughing In the whole book I was laugh without a break that everyone sitting near was starting me like I am doing something very odd At

  6. says: Free download پطرس کے مضامین review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Patras Bukhari Ö 4 Summary

    EBOOK پطرس کے مضامین this book is just amazingone of the best short stories book i have ever readall the stories are hilarious and simply amazing

  7. says: EBOOK پطرس کے مضامین

    Free download پطرس کے مضامین review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Patras Bukhari Ö 4 Summary A perfect treat for humor lovers Patras knows how to turn a boring subject into humorous content I came to know Patras after reading “Hostel Me Parhna” in my FSC as a chapter and I remember how we were amused by his witty humor I'm happy that I've completed this book and find all the other stories eually exceptional and chucklesome Mebel or mai is my fav of all I recommend this book to everyone who loves creative

  8. says: Free download پطرس کے مضامین Patras Bukhari Ö 4 Summary review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari

    EBOOK پطرس کے مضامین review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Patras Bukhari Ö 4 Summary Was first introduced to him by Lahore Ka jugrafia in first year Didn't catch my interest then Mainly because I w

  9. says: Patras Bukhari Ö 4 Summary review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari EBOOK پطرس کے مضامین

    EBOOK پطرس کے مضامین Patras Bukhari has set an amazing landmark in constituting humorous prose in Urdu literature These essays contain various characters from everyday life; from a very dull student to a henpecked husband I read these in middle school; and I still remember laughing out loud It's been one hundred years since these essays came out; but still managing to make us laugh signifies it's strength and importance

  10. says: EBOOK پطرس کے مضامین Patras Bukhari Ö 4 Summary Free download پطرس کے مضامین

    EBOOK پطرس کے مضامین A collection of short essays for cheering you up Makes you feel good even in worse moods Makes you laugh and smile on each line

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


  • Hardcover
  • null
  • پطرس کے مضامین
  • Patras Bukhari
  • Urdu
  • 22 September 2020
  • null

Free download پطرس کے مضامین

Patras Bukhari Ö 4 Summary review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Free download پطرس کے مضامین ہاسٹل گناہ ومعصیت کا دوزخ ہے“ ضمناً نفسیات کے اس پہلو پر روشنی پڑی کہ جذبات کو دبا کر تحت الشعور میں دھکیل دینا ان کو دُند مچانے کے لئے آزاد چھوڑ دینا اور ارتفاع میں مشکلیں حائل کرنایا ارتفاع سے محروم کر دینا ہے۔ پطرس کے الفاظ میں ”اس سے تحصیل علم کا جو ایک ولولہ ہمارے دل میں اُٹھ رہا تھا وہ کچھ بیٹھ سا گیا۔ ہم نے سوچا ماموں لوگ ماموں قسم کے لوگ؟ اپنی سرپرستی کے زعم میں والدین سے بھی زیادہ احتیاط برتیں گے۔ جس کا نتیجہ یہ ہوگا کہ ہمارے دماغی اور روحانی قوےٰ کو پھلنے پھولنے کا موقع نہ ملے گا اور تعلیم کا اصل مقصد فوت ہوجائے گا۔ چنانچہ وہی ہوا“۔ بعد ازاں اس ”وہی ہوا“ کی شرح ہے۔ امتحانات میں پےدر پے فیل ہونا، صلاحیتوں کی بےراہ روی اختیار کرنا۔ صاف گوئی اور راستبازی کاکج مج راستے اختیار کرنا۔ غسل خانے میں چھپ چھپ کر سگریٹ پینا۔ المختصر وہ آزادی وفراخی ووارفتگی نصیب نہ ہوئی جو تعلیم کا اصل مقصد ہے“۔ پطرس نے مسئلے کے اس پہلو کو ظریفانہ انداز میں اس حسن وخوبی سے وضاحت کی ہے کہ طبیعت عش عش کرتی ہے۔ تفصیل میں جانا مضمون کی لذتیت کو فنا کر دینا ہے۔ پڑھئے اور لطف اندوز ہوجائے۔ کتاب کا مقصد بھی غالباً فوت ہو جائے گا اس کے مضامین کی چیر پھاڑ کی گئی۔ کتاب انگریزی کے اس مقولے کی بہترین ترجمان ہے کہ مذاق کے پردے میں بہت سی سنجیدہ باتیں کہہ دی جاتی ہیں. Was first introduced to him by Lahore Ka jugrafia in first year Didn t catch my interest then Mainly because I was overthinking everything Decided to read of his work and I am surprised by how much I liked him His account on working women however brief was a little off putting in akhbar main zaroorat hai but his Mabel aur main was a uick save I thoroughly enjoyed the wholesome depiction of married life from a married mans point of view Was surprised that Patras made him cry because he missed his wife Don t know if it was supposed to be funny or just him trying to humanize men showing emotions either way I loved it

review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhariپطرس کے مضامین

Patras Bukhari Ö 4 Summary review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Free download پطرس کے مضامین پطرس کے مضامین میں ظرافت عام رواج سے ہٹ کر ہے۔ اور اس کا آغاز مختصر دیباچے ہی سے ہوتا ہے ”اگر یہ کتاب آپ کو کسی نے مفت بھیجی ہے تو مجھ پر احسان کیا ہے اگر آپ نے کہیں سے چرائی ہے تو میں آپ کے ذوق کی داد دیتا ہوں اپنے پیسوں سے خریدی ہے تو مجھے آپ سے ہمدردی ہے یعنی آپ کی حماقت سے ہمدردی ہے اب مصلحت یہی ہے کہ آپ اپنی حماقت کونبا ہیں اور اسے حق بجانب ثابت کریں“۔ نہ معلوم یہ حقیقت ہے یا میری شک بھری طبیعت کہ پطرس کے اظہار حقیقت کی تہ میں بھی ظرافت کی ایک لہر دوڑی ہوئی ہے کیونکہ اپنے استاد کی خدمت میں اعترافِ ممنونیت ان الفاظ میں کیاہے ”اس کتاب پر نظر ثانی کی اور اسے بعض لغزشوں سے پاک کیا“ جس کا مفہوم میرے نزدیک اس کے سوا نہیں ہوسکتا کہ جہاں کوئی بات ہوش مندی کی دیکھی اسے حماقت میں بدل دیا۔ کتاب میں گیارہ مضامین ہیں جو بہ ظاہر ”ہولا خبطا پن“ کے شاہکار ہیں مگر فی الحقیقت سوسائٹی اور تمدن کی دکھتی رگوں کو چھوا ہے اور خامکاریوں اور سفیہانہ رواسم وتوہمات کا پردہ فاش کیا ہے۔ پطرس نے اپنا مطلب زیادہ تر مزاح میں طنز کی پُٹ دے کر نکالا ہے۔ بخلاف دیگر ظرافت نگاروں کے جو تمسخر کو آلہٴ کار بناتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ان کے مضامین میں باوجود اس احساس کے کہ ہم کو اور معاف کیجئے گا آپ کو بےدال کا بودم بنایا جا رہا ہے جھنجھلاہٹ کے بجائے گدگدانے کی ادا نکلتی ہے اور اس. A few days back when I first started this collection of short essays I was mostly found rolling on the floor laughing in my room for no reason Patras can pick up a very trite and boring topic like the Geography of Lahore and embellish it with such spices that one can t help reading it twice thriceor as many times as your literary tastes can take it Doubtless to say he is ranked among authors like Doughlas Adams and PGWodehouse though I m not really sure if they were contemporaries This book must be read by everyone who understands Urdu and good humour Hats off to Bukhari for gifting Pakistan with such profound lasting literature

Patras Bukhari Ö 4 Summary

Patras Bukhari Ö 4 Summary review ¶ PDF, DOC, TXT or eBook Ö Patras Bukhari Free download پطرس کے مضامین ی کے ساتھ غو وتعمق کی دعوت ہوتی ہے۔ ان مضامین کے کاتب کو بھی ظرافت سے کافی بہرہ معلوم ہوتا ہے کیونکہ علاوہ دیگر مخترعات کے ”ہاسٹل میں پڑھنا“ کے عنوان کو ہر جگہ ”ہاسٹل پر پڑنا“بنا دیا ہے۔ مضمون میں ظرافت کی چاشنی پہلے ہی فقرے سے شروع ہے ”ہم نے کالج میں تعلیم تو ضرور پائی اور رفتہ رفتہ بی اے بھی پاس کر لیا“۔ رفتہ رفتہ اور بھی کی معنویت دعوت نظر دیتی ہے آگے چل کر بی اے کے خانے اس خوبی سے گنوائے ہیں کہ بایدوشاید۔ مضمون میں ایسے خاندان کی ذہنیت کا خاکہ ہے جو مہذب اور اخلاق پسندیدہ کا مالک ہونے کے باوصف قدامت پسند ہے اور حال کو ماضی کے آئینہ میں مشتبہ نظروں سے دیکھتا ہے۔ لڑکے نے انٹرنس کا امتحان تیسرے درجے میں پاس کیا ہے تاہم خوشیاں منائی جا رہی ہیں دعوتیں ہو رہی ہیں۔ مٹھائی تقسیم کی جا رہی ہے۔ خاندان خوش حال ہے مگر باوجود استطاعت کے لڑکے کو مزید تعلیم حاصل کرنے کے لئے ولایت نہ بھیجنے کی معقول ترین وجہ یہ ہے کہ گردو نواح سے کسی کا لڑکا ابھی تک ولایت نہ گیا تھا“۔ بڑی ہمت کی تو لڑکے کو لاہور بھیج دیا مگرہاسٹل کے بجائے ایک ایسے اجنبی عزیز کے یہاں قیام کا فیصلہ کیا جاتا ہے جس سے رشتہ داری کی نوعیت معلوم کرنے کے لئےخاندانی شجرے کی ورق گردانی کرنا پڑتی ہے تاہم ہاسٹل پر اس کے گھر کو یہ کہہ کر ترجیح دی جاتی ہے کہ ”گھر پاکیزگی اور طہارت کا ایک کعبہ اور. It was hilarious Even due to the fact that an excerpt from this book was included in my urdu textbook at school and I had a lot of memories about how we mocked each other with the jokes in this book I am a big fan of Urdu humour My favourites include works of Ibn e Insha Mushta Ahmed Yousufi Col Mohammad Khan and most of all Patras Bukhari I probably read the excerpt in my texbook than 15 20 times over the year and at that time I could remember it word by wordThen I got hold of his book and treated it in the very same wayI have a feeling that it might not be that popular with adults or those who have left student life long ago because most of the book is devoted to making fun of hostel and college lifeIt is undoubtedly a book to be treasured